-

19 October 2014

awalen kya chand nay kya bat samjai muj ko


اوّلیں چاند نے کیا بات سجھائی مجھ کو 
یاد آئی تیری انگشتِ حنائی مجھ کو 
سرِ ایوان طرب نغمہ سرا تھا کوئی 
رات بھر اُس نے تیری یاد دلائی مجھ کو 
دیکھتے دیکھتے تاروں کا سفر ختم ہُوا
سو گیا چاند مگر نیند نہ آئی مجھ کو 
سائے کی طرح میرے ساتھ رہے رنج و اَلم 
گردشِ وقت کہیں راس نہ آئی مجھ کو
دھوپ اُدھر ڈھلتی تھی دل ڈوبتا جاتا تھا اِدھر
آج تک یاد ہے وہ شامِ جدائی مجھ کو 
شہرِ لاہور تیری رونقیں دائم آباد
تیری گلیوں کی ہَوا کھینچ کے لائی مجھ کو 
ناصر کاظمی


♥♥♥♥♥

Newer post

Followers

♥"Flag Counter"♥

Flag Counter

facebook like slide right side

like our page

pic headar