-

15 January 2015

us nay dekha hi tu ham taptay howay sahra b


اس نے دیکھا ہے
تو ہم تپتے ہوئے صحرا بھی
مدتوں بعد سنور کر گل و گلزار ہوئے

اس نے پوچھا ہے
تو ہم شاعرِ دل بستہ بھی
خامشی چھوڑ کے شرمندہ ِ اظہار ہوئے

اس نے سمجھا ہے
تو ہم خوابِ پریشاں کے اسیر
حرفِ بے نام سے اندازِ ِ بیاں ٹھہرے ہیں

اس نے چاہا ہے
تو ہم خاک بسر اہلِ جنوں
سنگِ بے مایہ سے اب گہرِ ِ گراں ٹھہرے ہیں






♥♥♥♥♥

Newer post

Followers

♥"Flag Counter"♥

Flag Counter

facebook like slide right side

like our page

pic headar