-

19 January 2015

zakham dar zakham azeyat ka jahan pehal gya








زخم در زخم اذیت کا جہاں پهیل گیا
شام پهیلی ہے کہ آنکھوں میں دھواں پھیل گیا
صحن تک آنے لگے چاند جبینوں والے
دشت پھیلا ہے کہ اب شہرِ بُتاں پهیل گیا
سرحدِ عشق پہ جا پہنچے مسافر غم کے
اور پهر راه میں اک کوهِ گراں پهیل گیا
چشمِ پُر آب سے چھلکا ہوا اک دُرِ نجف
آیتیں پڑھتا سرِ نوکِ سناں پهیل گیا
حجرۂ عشق سے نکلے تھے مسافت باندھے
سینۂ چاک میں اک رنجِ رواں پهیل گیا
♥♥♥♥♥

Newer post

Followers

♥"Flag Counter"♥

Flag Counter

facebook like slide right side

like our page

pic headar