-

23 November 2014

tum tu wafa shnas ho mohbat nawaz ho

تم تو وفا شناس و محبت نواز ہو
ہاں میں دغا شعار سہی، بے وفا سہی
...
تم کو تو ناز ہے دلِ الفت نصیب پر
میں ماجرائے درد سے نا آشنا سہی
....
نا آشنائے درد کو شکوہ سے کیا غرض
تم کو شکایتِ غمِ فرقت روا سہی
...
تم کو تو رسمِ ظلم و ستم سے ہے اجتناب
تم سر بسر عطا سہی اور میں
خطاسہی...
میں محفلِ نشاط میں نغمہ طرازِ شوق
تم زیرِ لب تبسمِ حسرت نما سہی
....
تم کو خیالِ غم سببِ اضطرابِ دل
مجھ کو بیانِ درد مسرت فضا سہی
....
تم کو مرا تساہلِ خط وجہِ انتشار
مجھ کو تمہارا طرزِ تغافل ادا سہی
....
میں انتظارِ خط کی صعوبت سے بے خبر
تم انتظارِ خط میں سدا مبتلا سہی
...

میں اشتیاقِ دید و مروت سے بے نیاز
اور تم نگار خانہِ مہر و وفا سہی
...
♥♥♥♥♥

Newer post

Followers

♥"Flag Counter"♥

Flag Counter

facebook like slide right side

like our page

pic headar